ظہور كب ہوگا؟

ظہور كب ہوگا؟

ڈاكٹر : مہدى موعو د كب ظہور فرمائيں گے ؟

ہوشيار: ظہور كے لئے كسى وقت كى تعيين نہيں ہوئي ہے بلكہ وقت كى تعيين كرنے والے كو ائمہ اطہار عليہم السلام نے جھوٹا قرار ديا ہے چند احاديث ملاحظہ فرمائيں :

فضل كہتے ہيں : ميں نے امام محمد باقر (ع) كى خدمت ميں عرض كى : كيا مہدى كے ظہور كا وقت معيّن ہے ؟ امام (ع) نے جواب ميں تين مرتبہ فرمايا:

''جو شخص ظہور كے وقت كى تعيين كرتا ہے وہ جھوٹا ہے '' ( 1)

عبد الرحمن بن كثير كہتے ہيں : ميں امام صادق (ع) كى خدمت ميں تھا كہ مہزم اسدى آئے اور عرض كى : ميں آپ(ع) كے قربان ، قائم آل محمد (ص) كا ظہور اور حكومت حق كى تشكيل ، كہ جس كے آپ منتظر ہيں ، كب ہوگا ؟ آپ (ع) نے جواب ديا :

'' ظہور كے وقت كى تعيين كرنے والا جھوٹا ہے ، تعجيل كرنے والے ہلاك ہوتے ہيں اور سراپا تسليم لوگ نجات پاتے ہيں اور ان كى بازگشت ہمارى طرف ہوتى ہے '' (2)

محمد بن مسلم كہتے ہيں : امام صادق (ع) نے مجھ سے فرمايا :

''جو شخص وقت ظہور كى تعيين كرتاہے _ اس كى تكذيب كرنے ميں خوف محسوس نہ كرو كيونكہ ہم ظہور كے وقت كى تعيين نہيں كرتے '' _ اس سلسلہ ميں دس احاديث اور ہيں _ (3)

ا ن احاديث سے يہ بات سمجھ ميں آتى ہے كہ پيغمبر اكرم اور ائمہ اطہار (ع) نے ظہور كے وقت كى تعيين نہيں كى ہے اور ہر غلط فائدہ اٹھائے والے كا راستہ بند كرديا ہے _ پس اگر امام كى طرف كسى ايسى حديث كى نسبت دى جائے كہ جس ميں وقت كى تعيين كى گئي ہو تو اسكى تاويل كى جائے اگر قابل تاويل ہے يا اس كے بارے ميں سكوت كرنا چاہئے يا اسكى تكذيب كرنا چاہئے جيسے ابولبيد مخزومى كى ضعيف و مجمل حديث ميں امام كى طرف بعض مطالب كى طرف نسبت دى گئي ہے او ران كے ضمن ميں كہا ہے كہ ہمارا قائم '' الر'' ميں قيام كرے گا _ (4)

 

1_ بحار الانوار ج 52 ص 103_
2_ بحار الانوار ج 52 ص 103_
3_ بحارالانوار ج 52 ص 104_
4_ بحاراالانوار ج 52 ص 106_